Read چراغ تلے ´ PDF DOC TXT or eBook

Free download چراغ تلے

Read چراغ تلے ´ PDF, DOC, TXT or eBook Þ ❮EPUB❯ ✻ چراغ تلے ✶ Author Mushtaq Ahmad Yousufi – Dcmdirect.co.uk مشتاق احمد یوسفی نے اردو مزاح کو ایک نئے مزاج سے آشنا کیا ہے۔ یہ مزاج اس کا اپنا مزاج ہے۔اس رنگا رنگ م?ن میں تفکر و تفنن کا ایک خوبصورت امتزاج ملتا ہے۔ اور تحریر کا تیکھا اور رسیلا اسلوب، مشاہدے کی وسعت اور طبیعت کے نکھار کا پتا دیتا ہے۔ وہ لہجے کے اتار چڑھاؤ کی نزاکتوں سے واقف ہے اور الفاظ کا مزاج پہچانتا ہے۔یہی چیز ایک ایک لفظ کو تلوار اور ہر ایک مضمون کو خندۂ تیغِ اصیل بنا دیتی ہے۔. I love this

review æ PDF, DOC, TXT or eBook Ó Mushtaq Ahmad Yousufi

مشتاق احمد یوسفی نے اردو مزاح کو ایک نئے مزاج سے آشنا کیا ہے۔ یہ مزاج اس کا اپنا مزاج ہے۔اس رنگا رنگ مجموعے میں ایسے رچے ہوئے مزاج کی جھلکیاں نظر‌ آتی ہیں، جو چوٹ کھا کر بدمزہ نہیں ہوتا۔ طرزِ تپاکِ اہلِ دنیا دیکھ کر اس کی پیشانی پر بل نہیں پڑتے بلکہ سوچ کی گہری لکیریں ابھر آتی ہیں، ج?. I've only read essays such as the ones in Charagh Talay before in my Urdu textbooks in high school and onward It's been so long since I've read something like this The experience was invigorating I am little ashamed to admit that 50% of the Urdu idioms and phrases went straight over my head and very proud to admit that I understood the other 50% In my defense this is pre simplification garhi dense Urdu while the one we use today is 75% English Nevertheless I was enormously amused and am looking forward to reading books like theseThere are 13 satirical essays each focusing on a different thing I noticed how freuently Mirza Abdul Wadood Baig no idea who he is besides being the author's friend was mentioned His bickering with the writer always lead to some really funny moments I have a ton of favorite uotes from the book nowکسی شخص کی شاءستگی اور شرافت کا اندازہ آپ صرف اس سے لگا سکتے ہیں کہ وہ فرصت کے لمحات میں کیا کرتا ہے اور رات کو کس قسم کے خواب دیکھتا ہے۔ نۓ خانساماں نے جو قورمہ پکایا، اسمیں شوربے کا یہ عالم تھا کہ ناک پکڑ کر غوطے لگائیں تو شاید کوئی بوٹی ہاتھ آ جاۓ۔پییشانی اور سر کی حد فاصل اڑ چکی ہے۔ لھاذا منہ دھوتے وقت سمجھ میں نھیں آتا کہ کہاں سے شروع کروں۔ حساب میں فیل ہونے کو ایک عرصے تک اپنے مسلمان ہونے کی آسمانی دلیل سمجھتا رہا۔عمر کی اس منزل پر آ پہنچا ہوں کہ اگر کوئی سن ولادت پوچھ بیٹھے تو اسے فون نمبر بتا کر باتوں میں لگا لیتا ہوں۔

Mushtaq Ahmad Yousufi Ó 0 Read

چراغ تلے? دیکھتے دیکھتے تبسم زیرِ لب میں تحلیل ہو جاتی ہیں۔ وہ ہنسی ہنسی میں کام کی بات کہہ جاتا ہے۔ دوسروں پر ہنسنے سے پہلے اس نے اپنے ہی داغوں کی بہار دکھا کر دوسروں کو ہنسایا ہے اور پھر خود بھی اس ہنسی میں شریک ہو گیا ہے۔ یوسفی کا مزاح شگفتہ و شاداب ہے، اور اس کا طنز کڑی کمان کا تیر، ان مضام?. Yousufi sb always treat to read On of the finest writer currently we have A true legend